Establishment of Britain Government in India


 برطانوی حکومت کا قیام


انگریزوں کی ہندوستان  میں آمد کی وجہ ایسٹ انڈیا کمپنی کے قیام سے ہوا۔ برطانوی ایسٹ انڈیا کمپنی ہندوستان میں کاروباری مواقع کے بہانے قاٸم کی گٸ۔ جو کہ ایک تجارتی کمپنی کےطورپر بنایاگیا۔

انگریزشروع سے ہی ہندوستان پراپنا راج چاہتے تھے جن کی نظریں ہندوستان کے کاروبار پر بھی تھیں اور پورے خطے پر بھی۔

جنگِ آزادی  1857اء تک ہندستان میں اس کمپنی کا راج تھا بعدِ ازاں یہ راج پورے خطے پر  قبضے کی صورت اختیار کر گیا۔

 

برطانوی ایسٹ انڈیا کمپنی 

کو ملکہ الزبتھ اول کے عہد میں ہندوستان سے تجارت کا پروانہ ملا اس کے پیچھے سر ٹامس کی جدوجہد شامل تھی کہ مغل بادشاہ جہانگیر سے ایک معاہدہ دستخط  کرواۓ جا سکیں۔

1618ء مں جہانگیر کے ولی عہد شاہ جہاں سے اس معاہدے پر دسخط کروانے میں کامیابی ملی۔

کمپنی کو سورت میں آزادانہ کاروبار کرنے کی اجازت مل گٸ۔

 کمپنی دنیا کی پہلی لمیٹڈ کمپنی تھی۔ اور یہ 72000 پاٶنڈ کے سرماۓ سے شروع کی تھی جس کا مقصد اپنے سرمایہ داروں کو زیادہ سے زیادہ نفع پہنچانا تھا۔ 

مغل بادشاہ سے اجازت ملتے ہی  کمپنی نے ہندوستان کے مختلف ساحلی شہروں میں تجارتی اڈے بنانا شروع کردیے۔ ان فکٹریوں 

نے اصلحہ ریشم اور دیگر مصنوعات کی تجارت شروع کی جن میں ان کو خوب منافع ہوا ۔

 اورکیوں کہ اس کمپنی کے پیچھے انگریزوں کی باقاٸدہ سوچی سمجھی سازش تھی اور برطانیہ حکومت کا مکمل تعاون حاصل تھا لہذا انہوں نے مقامی سپاہی بھرتی کرنا شروع کردیے۔ایسے دیکھتےدیکھتے  یہ فیکٹریاں قلعے ار چھاٶنیوں کی شکل اختیار کرنے لگ گٸیں۔ جب کمپنی کےقدم جم گۓ فوجی بھی تیار کرلیے اور مالی حیثیت بھی مضبوط کرلی تب قبضے کے لیے حربے استمال کرنا شروع ہوۓ۔

ریاستوں کی آپسی لڑاٸ میں معاون کردار  نبھانا شروع کیا اور ان کی آپسی لڑاٸیوں میں 

کسی کو فوجی دستے سے مدد دی تو کسی کو ہتھیاروں کی فراہمی۔ اور بڑھتے بڑھتے اپنا کنٹرول  ساحلی علاقوں سے آگے بڑھادیا۔پلاسی کی جنگ جو کہ 1757ءمیں ہوٸ, انگریزوں کا اہم موڑ ثابت ہوٸ

جس میں ایسٹ انڈیا کے کلرک رابرٹ کلاٸیو کے ٣ ہزار سپاہیوں نے سراج الدلہ کی50 ہزار کی فوج کو غدار میر جعفر کی مدد سے شکست دی ۔ کلاٸیو نے سراج الدولہ کاصدیوں سے  جمع کردہ خزانہ سمندری جہازوں میں  بھ کر لندن پہنچوایا۔

ہندوستان  کی آزادی کے لیے یہ کمپنی جان لیوا ثابت ہوٸ۔

 جنوبی ہند میں انگریزوں کے ساتھ مسلسل لڑنے والی شخصیت  ٹیپو سلطان کی تھی جوکہ دھمکیوں یا طاقت سے نہیں بلکہ غداروں کی زبردست سازشوں سے 1799ءکوسرنگا پٹم کےمقام پر

شکست کھایا  ۔

 

اس دوران مختلف وجوہات  بنیں جیسے مغلوں کی نا اہلی, بیرونی حملے , مرہٹوں کی  بغاوت۔اور جنگِ پلاسی کے نصف صدی کے بعد ایسٹ انڈیا کمپنی کے سپاہیوں کی تعداد ڈھاٸی لاکھ سے بھی بڑھ چکی تھی اور انہوں نے  بنگال سے آگے نکل کر ہندوستان کے شمالی  دوسرے  بڑے حصوں پر  اپنا قبضہ قاٸم کیا۔ 1818ء میں مرہٹوں سے اس کے بعد سکھوں سے  اقتدار چھین کر مغربی حصے تک قابض ہونے میں کامیاب ہوٸ۔


 سندہ کا برطانوی حکومت سے الحاق 1843ء میں ہوا۔

1839 میں راجا رنجیت سنگھ کی موت کے بعد  حکومتی نظام بکھر گیا ۔پنجاب بھی انگرز بضے میں آگیا۔


1848ءلارڈ الہوذی گورنر جرنل کی حیثیت سے ہندوستان آیا۔


1850ء میں اودھ کا الحاق الہوذی  نے کیا۔ 

1947ءتک حیدرآباد واحد  شاہی ریاست  رہی جو برطانوی نظام سے وفاداری نبھاکر شاہی ریاست کے  طورپر قاٸم رہی۔

Establishment of Britain Government in India Establishment of Britain Government in India Reviewed by Syed Daniyal Jafri on August 29, 2020 Rating: 5

No comments:

Powered by Blogger.