Famous Angels of Allah and Duties

حضرت جبرائیل اللہ تبارک و تعالی نے اس کائنات میں بے شمار مخلوقات پیدا کی ہیں نوری ناری اور خاکی, نوری مخلوق فرشتوں کو کہا گیا ہے فرشتوں کا قرآن پاک میں 88 مرتبہ ذکر کیا گیا ہے یعنی فرشتوں کو نور سے بنایا گیا ہے اور ناری مخلوق شیاطین کو کہا جاتا ہے , شیاطین کو آگ سے بنایا گیا ہے ان تمام مخلوقات میں سب سے افضل اور بہترین مخلوق, خاکی مخلوق یعنی انسان ہیں ۔ ویسے تو فرشتوں کی تعداد لامحدود ہیں مگر ان میں سے چار مقرب فرشتے ہیں , مقرب فرشتہ وہ فرشتہ ہے جسے خدا کا قرب حاصل ہو, بائبل میں یہ لقب صرف میکائیل کےلے ہے لیکن مذہب اسلام کے مطابق کے چار مقرب فرشتے یہ ہیں ۔ (1) حضرت جبرائیل علیہ السلام (2) حضرت اسرافیل علیہ السلام (3) حضرت میکائیل علیہ السلام (4) حضرت عزرائیل علیہ السلام اللہ پاک نے ان سب کے ذمے الگ الگ کام لگائے ہیں قیامت تک یہ فرشتے وہی کام کرتے رہیں گے ۔ سب سے پہلے ذکر کرتے ہیں حضرت جبرائیل علیہ السلام کے حوالے سے ۔ حضرت جبرائیل علیہ السلام حضرت جبرائیل علیہ السلام کو اللہ نے نور سے پیدا کیا ان کا انگریزی میں نام ہے GABRIEL ,جبرائیل کے معنی ہیں خدا میری طاقت ہے اللہ پاک نے حضرت جبرائیل کو حضرت آدم علیہ السلام کو سب سے پہلے سجدہ کرنے پر انعام عطا کیا اور فرشتوں کا سردار بنا دیا اور وحی کا کام ذمہ لگا دیا, حضرت آدم علیہ السلام سے لے کر حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم تک تمام انبیاء تک پیغام آپ نے پہنچایا ۔ آپ کو فرشتوں کا سردار, پیامبر بھی کہا جاتا ہے ۔ حضرت جبرائیل کا نام مبارک قرآن مجید فرقان حمید میں چار بار ذکر کیا گیا ہے. سورۃ البقرۃ 98,99 سورۃ التحریم 4 سورۃ التکویر 15 آپ کو مختلف خطابات بھی عطا ہوئے اور انہی سے پکارا بھی جاتا ہے ۔ روح القدس روح الامین ناموس اعظم روح اعظم طائر سدرہ جب نبی پاک صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم معراج پر گئے تو مقام سدرۃ المنتھی تک جبرائیل علیہ السلام آپ کی رہنمائ کی تھی ۔ حضرت جبرائیل علیہ السلام کی عمر مبارک کا اندازہ اللہ پاک کے بعد صرف اور صرف نبی پاک صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو ہے حضرت اسرافیل اللہ تبارک و تعالی نے اس کائنات میں بے شمار مخلوقات پیدا کی ہیں نوری ناری اور خاکی, نوری مخلوق فرشتوں کو کہا گیا ہے فرشتوں کا قرآن پاک میں 88 مرتبہ ذکر کیا گیا ہے یعنی فرشتوں کو نور سے بنایا گیا ہے اور ناری مخلوق شیاطین کو کہا جاتا ہے , شیاطین کو آگ سے بنایا گیا ہے ان تمام مخلوقات میں سب سے افضل اور بہترین مخلوق, خاکی مخلوق یعنی انسان ہیں ۔ ویسے تو فرشتوں کی تعداد لامحدود ہیں مگر ان میں سے چار مقرب فرشتے ہیں , مقرب فرشتہ وہ فرشتہ ہے جسے خدا کا قرب حاصل ہو, بائبل میں یہ لقب صرف میکائیل کےلے ہے لیکن مذہب اسلام کے مطابق کے چار مقرب فرشتے یہ ہیں ۔ (1) حضرت جبرائیل علیہ السلام (2) حضرت اسرافیل علیہ السلام (3) حضرت میکائیل علیہ السلام (4) حضرت عزرائیل علیہ السلام اللہ پاک نے ان سب کے ذمے الگ الگ کام لگائے ہیں قیامت تک یہ فرشتے وہی کام کرتے رہیں گے ۔ اب ذکر کرتے ہیں حضرت اسرافیل علیہ السلام کے حوالے سے ۔ حضرت اسرافیل علیہ السلام حضرت اسرافیل علیہ السلام اللہ کے دوسرے مقرب فرشتے ہیں ہم یوں بھی کہہ سکتے ہیں کہ اللہ کے مقرب ملائکہ میں سے آپ دوسرے نمبر پر ہیں ۔ حضرت اسرفیل کا ذکر یہودیوں کے ہاں بھی ملتا ہے ۔ عبرانی زبان میں سرافیم, سرافیل اور سرافین نام ملتے ہیں ۔ عربی اسرافیل ہے ۔ حضرت اسرافیل کے ذمہ قیامت کے دن صور پھونکنا ہے ۔ اللہ تعالی نے آپ کو ایسی آواز عطا کی ہے جس میں اتنا خوف اور طاقت ہے کہ جس کو سنتے تمام ذی روح فوت ہو جائیں گے اور جب آپ دوسری مرتبہ صور پھونکیں گے تو تمام مردہ جو کائنات کے وجود میں آنے سے لے کر اب تک فوت ہوئے ہیں اللہ کے حکم سے جی اٹھیں گے اور ان سب کا حساب کتاب ہو گا ۔ مسلک اہل تشیعہ کے مطابق حضرت اسرافیل علیہ السلام کے ذمہ چند اہم کام ہیں اور اسی طرح بہت سارے اہم فرشتے آپ کے ماتحت ہیں حتی کہ حضرت جبرائیل علیہ السلام بھی آپ سے اللہ کا کلام سن آگے انبیاء علیہ السلام کو پہنچاتے ہیں ۔ یہ جو مؤکلین یعنی دائیں بائیں کندھے پر بیٹھنے والے فرشتے جو انسان کے نیک و بد اعمال کا رجسٹر یعنی اعمال نامہ میں اندراج کرتے ہیں وہ بھی روزانہ کے انسانی اعمال حضرت اسرافیل کو پیش کرتے ہیں اور حضرت اسرافیل اللہ کے حضور پیش کرتے ہیں ۔ اسی طرح اصحاب کہف کو جو ہزاروں سالوں سے سو رہے ہیں بیدار کیا ۔ ایک روایت کے مطابق معراج کی رات نبی محتشم صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کی مدد فرمائ ۔ صور پھونکے جانے کے عمل کا ذکر دوسرے مذاہب میں بھی ملتا ہے لیکن نام مختلف ہیں عیسائیت میں بھی اس عمل کو مانا گیا ہے اور حضرت اسرافیل کو ہی صور پھونکنے والا مانا گیا ہے ۔ جبکہ یہودیت صور پھونکے جانے والے عمل کو مانتے ہیں مگر اس عمل کا ذمہ دار حضرت اسرافیل علیہ السلام کو نہیں مانتے بلکہ شوفار یعنی بھیڑ کا سینگ جس سے آواز نکلے گی اور انسانوں کی موت کی وجہ بنے گی ۔ اسی طرح سناتن دھرم میں شنکھ یعنی بہت بڑا سیپ اس سے نکلنے والی آواز انسانوں کی موت کی وجہ بنے گی ۔ مذہب اسلام میں ان مقرب فرشتوں پر ایمان لانا ضروری قرار دیا گیا ہے یعنی ملائکہ پر ایمان یقین اعتقاد دین اسلام کے عقائد کا لازمی حصہ ہے ۔ ۔ حضرت میکائیل اللہ تبارک و تعالی نے اس کائنات میں بے شمار مخلوقات پیدا کی ہیں نوری ناری اور خاکی, نوری مخلوق فرشتوں کو کہا گیا ہے فرشتوں کا قرآن پاک میں 88 مرتبہ ذکر کیا گیا ہے یعنی فرشتوں کو نور سے بنایا گیا ہے اور ناری مخلوق شیاطین کو کہا جاتا ہے , شیاطین کو آگ سے بنایا گیا ہے ان تمام مخلوقات میں سب سے افضل اور بہترین مخلوق, خاکی مخلوق یعنی انسان ہیں ۔ ویسے تو فرشتوں کی تعداد لامحدود ہیں مگر ان میں سے چار مقرب فرشتے ہیں , مقرب فرشتہ وہ فرشتہ ہے جسے خدا کا قرب حاصل ہو, بائبل میں یہ لقب صرف میکائیل کےلے ہے لیکن مذہب اسلام کے مطابق کے چار مقرب فرشتے یہ ہیں ۔ (1) حضرت جبرائیل علیہ السلام (2) حضرت اسرافیل علیہ السلام (3) حضرت میکائیل علیہ السلام (4) حضرت عزرائیل علیہ السلام اللہ پاک نے ان سب کے ذمے الگ الگ کام لگائے ہیں قیامت تک یہ فرشتے وہی کام کرتے رہیں گے ۔ اب ذکر کرتے ہیں حضرت میکائیل علیہ السلام کے حوالے سے ۔ حضرت میکائیل علیہ السلام حضرت میکائیل علیہ السلام اللہ کے تیسرے مقرب فرشتے ہیں ۔ لفظ میکائیل کے معنی ہیں خدا کی مانند کون ہے حضرت میکائیل علیہ السلام کے ذمہ بارش برسانا, پانی مہیا کرنا, اور مخلوق خدا کو روزی مہیا کرنا ہے ۔ اللہ تعالی ان تمام مقرب فرشتوں کو جو جو حکم دیتا ہے یہ فرشتے وہی وہی کام کرتے ہیں ۔ حضرت میکائیل علیہ السلام بھی باقی تمام فرشتوں کی طرح دیو قامت اور بلند پرواز کے مالک فرشتے ہیں ۔ حضرت عزرائیل اللہ تبارک و تعالی نے اس کائنات میں بے شمار مخلوقات پیدا کی ہیں نوری ناری اور خاکی, نوری مخلوق فرشتوں کو کہا گیا ہے فرشتوں کا قرآن پاک میں 88 مرتبہ ذکر کیا گیا ہے یعنی فرشتوں کو نور سے بنایا گیا ہے اور ناری مخلوق شیاطین کو کہا جاتا ہے , شیاطین کو آگ سے بنایا گیا ہے ان تمام مخلوقات میں سب سے افضل اور بہترین مخلوق, خاکی مخلوق یعنی انسان ہیں ۔ ویسے تو فرشتوں کی تعداد لامحدود ہیں مگر ان میں سے چار مقرب فرشتے ہیں , مقرب فرشتہ وہ فرشتہ ہے جسے خدا کا قرب حاصل ہو, بائبل میں یہ لقب صرف میکائیل کےلے ہے لیکن مذہب اسلام کے مطابق کے چار مقرب فرشتے یہ ہیں ۔ (1) حضرت جبرائیل علیہ السلام (2) حضرت اسرافیل علیہ السلام (3) حضرت میکائیل علیہ السلام (4) حضرت عزرائیل علیہ السلام اللہ پاک نے ان سب کے ذمے الگ الگ کام لگائے ہیں قیامت تک یہ فرشتے وہی کام کرتے رہیں گے ۔ اب ذکر کرتے ہیں حضرت عزرائیل علیہ السلام کے حوالے سے ۔ حضرت عزرائیل علیہ السلام لفظ عزرائیل عبرانی زبان کا لفظ ہے اور یہ اللہ کے ملائکہ میں سے چوتھے فرشتے کا اسم گرامی ہے ۔ حضرت عزرائیل علیہ السلام کو عرف عام میں موت کا فرشتہ بھی کہا جاتا ہے اسی طرح اس فرشتہ کے اور بھی کئ نام ہیں جیسے فرشتہ اجل, ملک الموت, قابض الارواح ۔ یہ بھی روایات میں شامل ہے کہ جو لوگ جتنا گنہگار ہوتے ہیں ان کو یہ فرشتہ اتنی سختی سے تکلیف پہنچا کر ان کی روح قبض کرتا ہے اور جو لوگ جتنا اچھے اور نیک اعمال کرتے ہیں یہ فرشتہ ان کی روح اتنی آسانی اور خوش شکل ہو کر قبض کرتا ہے ۔ 
باقی ملائکہ کی طرح حضرت عزرائیل علیہ السلام پر بھی ایمان لانا ضروری ہے


مندرجہ ذیل کثیر الانتخابی سوالات کے درست جواب کا انتخاب کریں ۔
1... جبرائیل کے معنی ہیں ۔
الف خدا میرا ہے  ب خدا میری طاقت ہے  ج خدا مجھے قوت دے   د  خدا میری خواہش ہے 
2 ... حضرت جبرائیل علیہ السلام کو انعام ملا ۔
الف  سرداری کا  ب  نور کا  ج وحی کا  د  سید الملائکہ کا 
3... قرآن پاک میں نام لے کر چار بار ذکر ہوا ۔
الف حضرت اسرافیل کا  ب  حضرت میکائیل کا  ج حضرت جبرائیل کا  د  حضرت عزرائیل کا 
4... طائر سدرہ کہا گیا ہے ۔
الف  حضرت اسرافیل کو   ب حضرت عزاذیل کو ج حضرت جبرائیل کو  د  حضرت میکائیل کو 
5... حضرت جبرائیل علیہ السلام کی عمر ہے ۔
الف دس ہزار سال  ب  اسی ہزار سال  ج  لامحدود   د  اللہ کو علم ہے


مندرجہ ذیل کثیر الانتخابی سوالات کے درست جواب کا انتخاب کریں ۔
1.. دوسرے مقرب فرشتے ہیں 
الف حضرت جبرائیل  ب  حضرت اسرافیل  ج  حضرت میکائیل  د  حضرت عزرائیل 
2... کس مقرب فرشتے کا ذکر یہودیوں کے ہاں ملتا ہے ؟
الف  حضرت جبرائیل  ب  حضرت میکائیل  ج  حضرت اسرافیل  د حضرت عزرائیل 
3... قیامت کے دن کون سا فرشتہ صور پھونکے گا ۔
الف  حضرت جبرائیل  ب  حضرت عزرائیل ج حضرت میکائیل  د حضرت اسرافیل 
4... حضرت اسرافیل کا نام عبرانی زبان میں ہے ۔
الف  سرافیم  ب  سرافیل  ج  سرافین  د  یہ سب 
5... کس کی آواز سنتے ہی تمام ذی روح فوت ہو جائیں گے ؟
الف میکائیل  ب  اسرافیل  ج عزرائیل  د  جبرائیل


مندرجہ ذیل کثیر الانتخابی سوالات کے درست جواب کا انتخاب کریں ۔
1... قرآن پاک میں کل کتنے فرشتوں کا ذکر ہے ؟
الف 56  ب 89  ج  88  د 79 
2... میکائیل کے معنی ہیں 
الف  بارش برسانا  ب  خدا کی مانند  ج  خدا کی مانند کون ہے  د مکمل طاقت والا 
3... حضرت میکائیل کی ذمہ داری ہے ۔
الف بارش برسانا  ب  روزی مہیا کرنا  ج  مدد کرنا  د  الف اور ب 
4... لفظ میکائیل ہے ۔
الف  عربی زبان  ب  فارسی زبان  ج عبرانی زبان  د  سنسکرت زبان 
5... فرشتوں کی تعداد ہے :
الف  متعین  ب  غیر متعین  ج  دس کروڑ  د  اللہ بہتر جانتا ہے


Famous Angels of Allah and Duties Famous Angels of Allah and Duties Reviewed by Syed Daniyal Jafri on August 22, 2020 Rating: 5

No comments:

Powered by Blogger.