Hazrat Shees (A.S)

 حضرت شیث علیہ السلام

جب ابولبشر حضرت آدم علیہ السلام اپنے فرمانبردار لخت جگر ہابیل کی موت کے بعد دکھی تھے تو اللہ تعالی نے جبرائیل علیہ السلام کو  دکھی ماں باپ کی تسلی کےلے ایک خوشخبری کے ساتھ بھیجا ۔ جبرائیل امین نے زمین پر آ کر حضرت آدم اور اماں حوا کو تسلی دی اور بتایا کہ "آپ دونوں غم نا کریں بہت جلد اللہ آپ کو فرزند رشید عنایت کرے گا, ان کی نسل سے اللہ اپنے پیارے نبی حضرت محمد صلی اللہ علیہ وآلہ وسلم کو پیدا کرے گا, جو آخری نبی ہو گا اور اللہ کا محبوب بندہ ہو گا ۔


ہابیل کے قتل کے پانچ سال بعد حضرت شیث علیہ السلام پیدا ہوئے,  حسن, صورت اور خوب سیرت ہونے میں حضرت آدم علیہ السلام کے مشابہ تھے ۔ آپ اپنے والد کو باقی اولادوں میں سے زیادہ محبوب تھے ۔ حضرت شیث کا نام عبرانی زبان میں سیت ہے اور شیث عربی زبان کا  لفظ ہے ۔ آپ سے جڑی کئ باتیں اسرائیلی روایات سے ملتی ہیں, لیکن آپ کا باقاعدہ ذکر قرآن پاک میں نہیں ہے ۔ 


آپ کے دور میں دو طرح کے لوگ تھے ایک وہ جو آپ کی فرمانبرداری کرتے تھے اور دوسرے وہ جو قابیل کی اطاعت کرتے تھے, ان کے رویے برے تھے,  بداخلاق اور جھگڑالو تھے ۔ جب آپ نے نصیحت کی تو کچھ نے کہا مانا اور کچھ اسی طرح نافرمانی پر ڈٹے رہے ۔ 


اسرائیلی روایات کے مطابق کے اور کچھ مسلم مؤرخین کی تحقیق ہے جو کہ قیاس آرائ پر مشتمل ہے اس کو ہم مستند نہیں کہہ سکتے کیونکہ وہ اللہ اور اللہ کے رسول کے کلام و حدیث میں موجود نہیں ہے , آپ کی عمر نو سو بارہ برس ہے ۔


آپ نے اپنی عمر کے آخری حصے میں یہ نصیحتیں کیں ۔


مومن حقیقی وہ ہے جو اللہ کو پہچانے,  نیک اور بد کو جانے, بادشاہ وقت کا حکم بجا لائے, ماں باپ کا حق پہچانے اور ان کی خدمت کرے, صلہ رحمی اختیار کرے, غصے پر قابو رکھے, محتاجوں اور مسکینوں کو صدقہ دینا اور رحم کرنا, گناہوں سے پرہیز اور مصیبتوں میں صبر کرنا اور شکر الہی کا ذکر کرنا ۔

Hazrat Shees (A.S) Hazrat Shees (A.S) Reviewed by Syed Daniyal Jafri on August 22, 2020 Rating: 5

No comments:

Powered by Blogger.